Fatwa Online Durood-e-Minhaj
Home Latest Questions Most Visited Ask Scholar
   
فتویٰ آن لائن - کیا سود کے عوض گھر خریدنا جائز ہے؟

کیا سود کے عوض گھر خریدنا جائز ہے؟

موضوع: قرض   |  سود

سوال پوچھنے والے کا نام: حسیب       مقام: انڈیا

سوال نمبر 1804:
السلام علیکم کیا قرض پر گھر لیا جا سکتا ہے جس کے عوض سود بھی ادا کرنا پڑتا ہے۔ مجھے بتایا گیا ہے کہ ایسی صورت میں گھر لینا جائز ہے۔ براہ مہربانی اس کا جواب دیں۔

جواب:

اگر بینک سے قرض لے کر مکان خریدا اور قرض بمع سود واپس کیا تو یہ جائز نہ ہوگا۔ اس کے برعکس اگر بینک نے کہیں سے مکان خرید کر آپ کو اصل قیمت سے زیادہ پر فروخت کیا اور رقم اقساط میں وصول کی تو یہ صورت جائز ہو گی۔

واللہ و رسولہ اعلم بالصواب۔

مفتی: حافظ محمد اشتیاق الازہری

تاریخ اشاعت: 2012-06-02


Your Comments