Fatwa Online Durood-e-Minhaj
Home Latest Questions Most Visited Ask Scholar
   
فتویٰ آن لائن - کیا مجبوری کی حالت میں رشوت و سفارش جائز ہوتی ہیں؟

کیا مجبوری کی حالت میں رشوت و سفارش جائز ہوتی ہیں؟

موضوع: رشوت   |  حرام  |  جدید فقہی مسائل

سوال پوچھنے والے کا نام: محمد اسرار       مقام: پاکستان

سوال نمبر 1778:
ہمارے ملک میں بمشکل ہی کوئی ایسی سرکاری نوکری ہو گی جو رشوت و سفارش کے بغیر مل جائے،ہر آدمی متبادل راستے یعنی مزدوری یا ذاتی بزنس تو نہیں کر سکتا تو کیا ایسی نوکری کرنا حرام ہے؟ وضاحت سے جواب دیں.

جواب:

اگر کوئی شخص نوکری کا اہل ہو اس کے اندر قابلیت موجود ہو اور رشوت وسفارش کے بغیر ناممکن ہو تو ایسی صورت میں اپنا حق حاصل کرنے کے لئے رشوت دی جا سکتی ہے، اور اگر اس نوکری کا اہل نہ ہو، قابلیت نہ ہو اور رشوت کے ذریعے وہ یہ نوکری حاصل کرے جس کا وہ اہل نہیں تو ایسی صورت میں رشوت وسفارش دونوں حرام ہوں گی۔ کیونکہ رشوت وسفارش کے ذریعے وہ کسی حقدار کا حق  چھین رہا ہے۔ سو یہ حرام ہے۔

واللہ و رسولہ اعلم بالصواب۔

مفتی: حافظ محمد اشتیاق الازہری

تاریخ اشاعت: 2012-05-19


Your Comments