کیا مردے کے پاس غسل اور کفن سے قبل پڑھائی کرناجائز ہے؟

سوال نمبر:1571
کیا مردے کے پاس غسل اور کفن سے قبل پڑھائی کرناجائز ہے؟

  • سائل: محمد ہادیمقام: گجرات
  • تاریخ اشاعت: 02 اپریل 2012ء

زمرہ: احکام میت

جواب:

جی ہاں، مردے کے پاس غسل اور کفن سے قبل پڑھائی کرنا جائز ہے۔ اس میں کوئی حرج نہیں۔ اس کے علاوہ کسی بھی وقت مردے کے پاس پڑھائی کرنا جائز ہے۔

واللہ و رسولہ اعلم بالصواب۔

مفتی: حافظ محمد اشتیاق الازہری

اہم سوالات
  • بٹ کوئن کی ٹریڈنگ کا کیا حکم ہے؟
  • قطع تعلقی کرنے والے رشتے داروں سے صلہ رحمی کا کیا حکم ہے؟
  • مزارات پر پھول چڑھانے اور چراغاں کرنے کا کیا حکم ہے؟