Fatwa Online Durood-e-Minhaj
Home Latest Questions Most Visited Ask Scholar
   
فتویٰ آن لائن - دوسروں کا مال کھانا کیسا ہے؟

دوسروں کا مال کھانا کیسا ہے؟

موضوع: غصب   |  غصب کے احکام   |  غصب شدہ مال کی واپسی کی شرائط   |  غصب میں اختلاف دعوی کے احکام   |   غصب شدہ کا ضمان(جرمانہ)

سوال پوچھنے والے کا نام: حسیب اللہ خان شیرانی       مقام: ہندوستان

سوال نمبر 1562:
میں‌ نے ایک کتاب خریدی جس کی قیمت دکاندار نے اصل سے کم وصول کی، اور مجھے اس وقت پتہ تھا کہ یہ حساب غلط کر رہا ہے۔ اس وقت اس نے مجھ سے جتنے پیسے مانگے میں نے ادا کر دئیے۔ بعد میں مجھے معلوم ہوا کہ دوسروں کا مال نہیں‌ کھانا چاہیے۔ اب میں اس کو پیسے لوٹانا چاہتا ہوں مگر اتنے سال گزر گئے ہیں‌ کہ دکان کا صحیح طرح سے یاد نہیں کہ کونسی تھی، مجھے اس کا حل قرآن و سنت کی روشنی میں دیجئے۔

جواب:

دوسروں کا مال ناجائز طور پر کھانا حرام ہے۔ اللہ تعالیٰ نے ارشاد فرمایا :

يَا أَيُّهَا الَّذِينَ آمَنُواْ لاَ تَأْكُلُواْ أَمْوَالَكُمْ بَيْنَكُمْ بِالْبَاطِلِ إِلاَّ أَن تَكُونَ تِجَارَةً عَن تَرَاضٍ مِّنكُمْ وَلاَ تَقْتُلُواْ أَنفُسَكُمْ إِنَّ اللّهَ كَانَ بِكُمْ رَحِيمًاo

(النساء، 4 : 29)

اے ایمان والو! تم ایک دوسرے کا مال آپس میں ناحق طریقے سے نہ کھاؤ سوائے اس کے کہ تمہاری باہمی رضا مندی سے کوئی تجارت ہو، اور اپنی جانوں کو مت ہلاک کرو، بیشک اللہ تم پر مہربان ہےo

آپ تھوڑا غور و فکر کریں، سوچیں، کسی سے پوچھیں، اگر اس وقت آپ کے ساتھ کوئی دوست، بھائی ہو تو اس سے پوچھیں، اگر یاد آ جائے تو اس کو ادا کر دیں، نہیں تو اتنے پیسے صدقہ کر دیں۔ اللہ تعالیٰ سے معافی مانگیں، ان شاء اللہ، اللہ تعالیٰ ضرور معاف فرما دے گا۔ پریشان ہونے کی ضرورت نہیں ہے۔ خطاء، خلطی انسان ہی کرتا ہے، اللہ تعالیٰ معاف فرمانے والا ہے۔

واللہ و رسولہ اعلم بالصواب۔

مفتی: حافظ محمد اشتیاق الازہری

تاریخ اشاعت: 2012-04-02


Your Comments