Fatwa Online Durood-e-Minhaj
Home Latest Questions Most Visited Ask Scholar
   
فتویٰ آن لائن - مردوں کے لیے ریشم کا لباس پہننا کیسا ہے؟

مردوں کے لیے ریشم کا لباس پہننا کیسا ہے؟

موضوع: لباس

سوال پوچھنے والے کا نام: ثاقب       مقام: گجرات، پاکستان

سوال نمبر 1520:
جو لوگ ریشم کا بنا ہوا لباس پہنتے ہیں ان کے بارے میں‌ کیا حکم ہے؟ یہاں پر نعت خوان ریشم سے بنے ہوئے جبے پہنتے ہیں اور لوگ اس وجہ سے ان کو سننا پسند نہیں کرتے۔

جواب:

مردوں کے لئے ریشم کا لباس اور سونا پہننا حرام ہے، حضرت حزیفہ رضی اللہ عنہ سے روایت ہے آپ فرماتے ہیں کہ حضور نبی اکرم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے فرمایا سونے چاندی کے برتنوں میں پانی نہ پیو اور نہ ہی ریشم اور دیباج کے کپڑے پہنو کیونکہ یہ چیزیں دنیا میں کفار کے لئے ہیں اور تمہارے لئے آخرت میں ہیں۔

(سنن أبی داؤد : 4 / 47)

خارش کی وجہ سے ریشم پہننا مباح ہے، اسی طرح جس مریض کو ریشم کا کپڑا پہننا مفید ہو، اس کے لئے بھی مباح ہے۔ حضرت انس رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ حضور نبی اکرم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے حضرت عبد الرحمان بن عوف اور حضرت زبیر رضی اللہ عنہما کو سفر میں ریشم پہننے کی اجازت دی تھی، کیونکہ وہ دونوں حضرات خارش میں مبتلا تھے۔

سنن أبی داؤد : 4 / 50

لہذا اگر شرعی عذر ہو تو ریشم پہننا جائز ہے، ورنہ حرام ہے۔

واللہ و رسولہ اعلم بالصواب۔

مفتی: حافظ محمد اشتیاق الازہری

تاریخ اشاعت: 2012-03-26


Your Comments