Fatwa Online Durood-e-Minhaj
Home Latest Questions Most Visited Ask Scholar
   
فتویٰ آن لائن - کیا بیوی کو چھونے سے قبل طلاق دی جا سکتی ہے؟

کیا بیوی کو چھونے سے قبل طلاق دی جا سکتی ہے؟

موضوع: طلاق   |  غیر مدخولہ کی طلاق

سوال پوچھنے والے کا نام: شاہین       مقام: پاکستان

سوال نمبر 1484:
کیا شوہر اور بیوی کے مابین کوئی تعلق نہ بنے اور شوہر اسے طلاق دے دیتا ہے تو کیا وہ طلاق ہو جاتی ہے؟

جواب:

شرعی نکاح کے بعد بغیر کسی تعلق کے، اگر شوہر اپنی بیوی کو طلاق دے تو ایسی طلاق واقع ہو جاتی ہے۔ طلاق کے لیے نکاح کا ہونا ضروری ہے، آپس کے جسمانی تعلقات یا رخصتی کا نہیں، اگر شرعی طور پر نکاح ہو تو پھر طلاق ہو جاتی ہے۔ خلوت صحیحہ سے پہلے ایک بار طلاق دینے سے ہی نکاح ٹوٹ جاتا ہے اور عورت آزاد ہو جاتی ہے اور عدت کی بھی ضرورت نہیں ہوتی۔ عورت جہاں چاہے نکاح کر سکتی ہے، اگر وہ دونوں دوبارہ اکھٹے رہنا چاہتے ہیں تو پھر تجدید نکاح کرنا پڑے گا، کیونکہ اس میں رجوع نہیں ہوتا، بلکہ صرف تجدید نکاح ہی کرنا پڑتا ہے۔

واللہ و رسولہ اعلم بالصواب۔

مفتی: حافظ محمد اشتیاق الازہری

تاریخ اشاعت: 2012-03-14


Your Comments