کیا شدید غصہ کی حالت میں طلاق ہو جاتی ہے؟

سوال نمبر:1365
واقعہ کچھ یوں ہے کہ گھریلو معاملات پر ناچاقی کی صورت میں میرے شوہرِ نامدار (محمد صدیق) جو کہ ڈاکٹروں کے مطابق عرصہ سے ہائی بلڈ پریشر (فشارِ خون) کے مریض ہیں اور اپنے غصہ پر ضبط رکھنا ان کے لیے انتہائی مشکل ہے، غصے کی حالت میں بے قابو ہو کر انہوں نے مجھ پر دست درازی (مار پیٹ) کی جس کے رد عمل میں مجھ سے کوئی گستاخی سرزد ہوگئ، اس صورت حال کے پیش نظر انہوں نے مجھے ایک دفعہ کہا کہ "میں تجھے طلاق دیتا ہوں " اور جواباً میں نے بھی عرض کر دیا کہ "ٹھیک ہے" اور بعد میں انہوں نے یہی الفاظ مزید تین دفعہ دہرا دئیے کہ میں تجھے طلاق دیتا ہوں ۔ جس کے بعد ہم نے علیحدگی اختیار کر لی اور گفتگو سے بھی اجتناب کیا، کچھ ہی دنوں کے بعد انہوں نے بذریعہ (اولاد) رجوع کی کی خواہش کا اظہار کیا، مگر میں نے اس بات کے جواب میں کہہ بھیجا کہ میں ان سے بات کرنا نہیں چاہتی۔ پھر ایک ماہ گزر جانے کے بعد انہوں نے بذات خود مجھے فون کر کے رجوع کی خواہش کا اظہار کیا اور مجھ سے معذرت بھی کی۔ اور کہا کہ انہوں نے قطعاً ارادۃ طلاق نہیں دی۔ اور جو کچھ بھی ہوا وہ انتہائی غصہ کی حالت میں ہوا۔ اس پر وہ انتہائی پشیمان اور شرمندہ ہیں ۔ اس پر مجھے بھی اپنی غلطی (گستاخی) پر پشیمانی ہوئی اور میں نے بھی ان سے معذرت کی۔ پھر ایک ماہ کے بعد ہم نے آمنے سامنے بیٹھ کر ایک دوسرے سے معذرت کی اور رجوع کی خواہش کا ایک دورے سے اظہار کیا، اب تقریباً 6 ماہ گزر چکے ہیں (چونکہ یہ واقعہ 14 جون 2011 کا ہے) خاندانی مسائل بھی در پیش ہیں اور دینی حوالہ سے بھی یہ معاملہ کافی حل طلب ہے، بعض علماء سے گفتگو کے بعد اب آخر میں آپ سے رجوع کر رہی ہوں ، تاکہ آپ کے فتویٰ کے بعد آخری فیصلہ کر سکوں۔

  • سائل: عادلمقام: لاہور
  • تاریخ اشاعت: 06 مارچ 2012ء

زمرہ: طلاق

جواب:

اس سوال کا تفصیلی جواب گزر چکا ہے
براہِ مہربانی مطالعہ کے لیے یہاں کلک کریں

واللہ و رسولہ اعلم بالصواب۔

مفتی: عبدالقیوم ہزاروی

اہم سوالات
  • بٹ کوئن کی ٹریڈنگ کا کیا حکم ہے؟
  • قطع تعلقی کرنے والے رشتے داروں سے صلہ رحمی کا کیا حکم ہے؟
  • مزارات پر پھول چڑھانے اور چراغاں کرنے کا کیا حکم ہے؟