Fatwa Online Durood-e-Minhaj
Home Latest Questions Most Visited Ask Scholar
   
فتویٰ آن لائن - کیا ایسے پلاٹ پر زکوٰۃ ہے جو بیچنے کے لیے خریدا گیا ہو ؟

کیا ایسے پلاٹ پر زکوٰۃ ہے جو بیچنے کے لیے خریدا گیا ہو ؟

موضوع: فرضیت زکوۃ   |  نصاب زکوۃ   |  خریدو فروخت (بیع و شراء، تجارت)

سوال پوچھنے والے کا نام: فاروق       مقام: پاکستان

سوال نمبر 1136:
کیا ایسے پلاٹ پر زکوٰۃ ہے جو بیچنے کے لیے خریدا گیا ہو ؟

جواب:

زمین کی قیمت پر زکوٰۃ نہیں۔ اگر وہاں کوئی چیز کاشت ہوتی ہے تو پیداوار پر عشر فرض ہے۔ یونہی باغ ہو تو اس کے پھل پر، اگر مکان ہے، پلاٹ ہے تو اس پر کوئی زکوۃ نہیں، خواہ کتنی مالیت کا ہو۔ ہاں ان سے جو آمدنی بصورت کرایہ آتی ہو تو اس پر اگر وہ نصاب شرعی کے برابر ہے تو زکوۃ سال کے بعد فرض ہوگی، صرف زمین یا مکان یا پلاٹ پر کوئی زکوۃ یا عشر وغیرہ نہیں۔ خواہ مالیت لاکھوں روپے ہو۔

آپ کے سوال کا ایک ہی جواب ہے کہ زکوۃ پلاٹوں‘ مکانوں وغیرہ پر نہیں۔

واللہ و رسولہ اعلم بالصواب۔

مفتی: عبدالقیوم ہزاروی

تاریخ اشاعت: 2011-08-09


Your Comments