اگر عورت کو لکھی ہوئی طلاق وصول نہ ہو تو اس کا کیا حکم ہوگا؟

سوال نمبر:1114

السلام علیکم !

مسٹر عبداللہ نے اپنی بیوی کو صاف صاف الفاظ میں‌ تین طلاقیں لکھ کر بھیج دیں، اب سوال یہ ہے کہ اگر عورت وصول کرتی ہے یا نہیں کرتی دونوں صورتوں میں کیا حکم ہے؟

والسلام، جزاک اللہ و احسنی الجزاء

  • سائل: عارف الاسلام، ثناء اللہمقام: ابوظہبی، یو اے ای
  • تاریخ اشاعت: 09 جولائی 2011ء

زمرہ: طلاق   |  طلاق مغلظہ(ثلاثہ)   |  نکاح

جواب:
اکھٹی تین طلاقیں دینے پر طلاق واقع ہوجائے گی۔ اب آپ اپنی سابقہ بیوی سے تعلقات زن و شو بحال نہیں کر سکتے تاوقتیکہ وہ عدت گزار کر کسی اور سے نکاح و قربت نہ کر لے۔ اگر نکاح و قربت کے بعد اس دوسرے خاوند نے اسے طلاق دی اور عدت گزر گئی تو آپ سے باہمی رضا مندی سے دوبارہ نکاح کر سکتی ہے۔ ورنہ نہیں۔ خاوند کے زبانی یا تحریری طور پر دینے سے طلاق ہوجاتی ہے خواہ عورت وصول کرے خواہ نہ کرے۔ اس کو علم ہو خواہ نہ ہو۔ اللہ پاک ہم کو ہدایت دے۔

واللہ و رسولہ اعلم بالصواب۔

مفتی: عبدالقیوم ہزاروی

اہم سوالات
  • بٹ کوئن کی ٹریڈنگ کا کیا حکم ہے؟
  • کاروباری شراکت کے اسلامی اصول کیا ہیں؟
  • وطن سے محبت کی شرعی حیثیت کیا ہے؟