کیا غیر مسلم کو زکوٰۃ دی جاسکتی ہے؟

سوال نمبر:1009
کیا غیر مسلم کو زکوٰۃ دی جاسکتی ہے؟

  • سائل: نوید غوثمقام: لاہور، پاکستان
  • تاریخ اشاعت: 25 مئی 2011ء

زمرہ: زکوۃ

جواب:
زکوۃ کے مصارف میں سے ایک مؤلفۃ القلوب ہیں۔ اس سے مراد وہ غیر مسلم ہیں جن کی تالیف قلب مقصود ہے یعنی ان لوگوں کو اسلام کی طرف مائل کرنا اور اسلام کے خلاف جذبات کو ٹھنڈا کرنا وغیرہ ہے۔ اگر آپ سمجھتے ہیں کہ فلاں شخص جو کہ غیر مسلم ہے اس کو زکوۃ اس لیے دیتا ہوں تاکہ اسلامی اقدار اور اس سلوک کی وجہ سے شاید وہ اسلام قبول کرلے گا تو اس نیت سے جائز ہے یا کم از کم اسلام مخالف رویہ تبدیل ہو جائے گا تو پھر ایسے غیر مسلم کو زکوۃ دینا جائز ہے۔

امام رازی فرماتے ہیں :

الصحيح ان هذا الحکم غير منسوخ و ان للامام ان يتألف قوما علی هذا الوصف و يدفع اليهم سهم المؤلفة.

کبير، ج : 16، ص : 11
قرطبی، ج : 8، ص : 114
بدائع الصنائع، ج : 2، ص : 45
فتح القدير، ج : 1، ص : 200

صحیح یہ ہے کہ یہ حکم (یعنی مؤلفۃ القلوب کا حکم) منسوخ نہیں ہے اور امام کا حق ہے کہ ایسے لوگوں کو مانوس کرتا رہے اور ان کو مؤلفۃ القلوب کا حصہ دیتا رہے۔

یہ حکم منسوخ نہیں ہے، حالات کو پیش نظر رکھنا چاہیے اگر حصہ دینا دین کے لیے فائدہ مند ہو تو دینا چاہے اگر نہ ہو تو نہ دیں واجب نہیں ہے۔

واللہ و رسولہ اعلم بالصواب۔

مفتی: صاحبزادہ بدر عالم جان

اہم سوالات
  • بٹ کوئن کی ٹریڈنگ کا کیا حکم ہے؟
  • کاروباری شراکت کے اسلامی اصول کیا ہیں؟
  • وطن سے محبت کی شرعی حیثیت کیا ہے؟