Fatwa Online

کیا شام کے وقت جھاڑو دینا ممنوع ہے؟

سوال نمبر:5192

السلام علیکم! میرا سوال یہ ہے کہ صبح اور مغرب کے وقت جب پہر تبدیل ہوتا ہے اس وقت جھاڑو دینے کا کیا حکم ہے؟ بعض‌ لوگ کہتے ہیں کہ اس سے رزق میں تنگی ہوتی ہے۔ دوسرا سوال یہ ہے کہ شریعت کی نظر میں نحوست کیا شے ہے؟

سوال پوچھنے والے کا نام: نبیل فیاض

  • مقام: لاہور
  • تاریخ اشاعت: 09 جنوری 2019ء

موضوع:تواہم پرستی

جواب:

آپ کے سوالات کے جوابات بالترتیب درج ذیل ہیں:

1۔ گھر کی صفائی و ستھرائی کے لیے شرعاً نہ تو کسی وقت کی تخصیص کی گئی ہے اور نہ کوئی وقت ممنوع قرار دیا گیا ہے۔ ضرورت اور سہولت کے پیشِ نظر کسی بھی وقت صفائی کی جاسکتی ہے۔ جھاڑو لگانے کے لیے کسی وقت کی شرعاً کوئی ممانعت نہیں ہے۔ اللہ تعالیٰ صفائی پسند لوگوں سے محبت فرماتا ہے۔ قرآنِ مجید میں اللہ تعالیٰ کا ارشاد ہے:

إِنَّ اللّهَ يُحِبُّ التَّوَّابِينَ وَيُحِبُّ الْمُتَطَهِّرِينَ.

بیشک اﷲ بہت توبہ کرنے والوں سے محبت فرماتا ہے اور خوب پاکیزگی اختیار کرنے والوں سے محبت فرماتا ہے۔

البقرة، 2: 222

اس لیے پہر کی تبدیلی کے ساتھ جھاڑو دینے کا کوئی تعلق نہیں۔

2۔ شریعتِ اسلامیہ کی نظر میں نحوست انسان کی اپنی بداعمالیوں کی ہوتی ہے۔ کسی دن، جگہ، وقت، جانور یا شخص کو منحوس سمجھنا محض توہم پرستی اور ایمان کی کمزوری کی علامت ہے۔ اس کی مزید وضاحت کے لیے ملاحظہ کیجیے: بدشگونی لینا کیسا ہے؟

واللہ و رسولہ اعلم بالصواب۔

مفتی:محمد شبیر قادری

Print Date : 09 December, 2022 07:27:06 AM

Taken From : https://www.thefatwa.com/urdu/questionID/5192/