Fatwa Online

کیا ’الصلوٰت عماد الدین‘ حدیث ہے؟

سوال نمبر:4765

السلام علیکم! آپ کے اس صفحہ پر حدیثِ مبارکہ ’الصلوٰت عمادالدین‘ کا حوالہ مکمل نہیں معلوم ہوتا۔ براہِ مہربانی اس حدیث کا مکمل متن اصل کتب کے حوالہ کے ساتھ عنایت فرمائیں۔ نیز اس حدیث کا درجہ بھی بیان فرما دیں۔ جزاک اللہ خیر.

سوال پوچھنے والے کا نام: محمد فاروق ناطق

  • مقام: لاہور، پاکستان
  • تاریخ اشاعت: 22 مارچ 2018ء

موضوع:حدیث اور علم حدیث

جواب:

روایت کے الفاظ ہیں:

اَلصَّلَاةُ عِمَادُ الدِّیْنِ، فَمَنْ تَرَکَهَا فَقَدْ هَدَمَ الدِّیْنَ.

نماز دین کا ستون ہے تو جس نے اس کو ترک کیا پس اس نے پورے دین کو منہدم کیا۔

  1. امام غزالی، احیاء علوم الدین، 1: 147، بیروت؛ دارالمعرفة
  2. عجلونی، کشف الخلفاء، 2: 40، بیروت؛ مؤسسة الرسالة

امام غزالی نے یہ حدیث نقل کر کے لکھا ہے کہ اس کی سند میں ضعف ہے۔ امام بیہقی، امام حاکم اور عکرمہ کے خیال میں یہ حضرت عمر رضی اللہ عنہ سے نہیں بلکہ عبداللہ بن عمر رضی اللہ عنہما سے مروی ہے۔ یہ حدیث ضعیف ہے مگر فضائل کے باب میں ضعیف حدیث قابلِ قبول ہے، اس لیے اسے بیان کرنے میں کوئی حرج نہیں۔

واللہ و رسولہ اعلم بالصواب۔

مفتی:محمد شبیر قادری

Print Date : 25 June, 2021 06:44:03 AM

Taken From : https://www.thefatwa.com/urdu/questionID/4765/