Fatwa Online

طلاقِ صریح و کنایہ سے کیا مراد ہے؟

سوال نمبر:4687

طلاق صریح اور طلاقِ کنایہ سے کیا مراد ہے؟

سوال پوچھنے والے کا نام: بنیامین ثناءاللہ

  • مقام: کوٹ مومن
  • تاریخ اشاعت: 25 جنوری 2018ء

موضوع:طلاق   |  طلاق صریح   |  طلاق کنایہ

جواب:

الفاظ کے اعتبار سے طلاق کی دو قسمیں ہیں:

  1. طلاق صریح
  2. طلاق کنایہ

طلاق صریح سے مراد وہ طلاق ہے جس میں ایسے الفاظ کے ذریعے طلاق دی جائے جو طلاق کے لئے بالکل واضح ہوں اور ان کے بولنے کے بعد یہ جاننے کی ضرورت نہ رہے کہ شوہر نے یہ لفظ بولتے ہوئے طلاق کی نیت کی تھی یا نہیں۔ جیسے: عربی کا لفظ طلاق، اردو کا جملہ ’تجھے طلاق ہے‘ اور انگریزی کا لفظ Divorce وغیرہ طلاق کے لیے صریح الفاظ ہیں۔ انہیں بولتے ہی طلاق واقع ہو جائے گی خواہ بیوی کو مذاق میں بولے جائیں یا سنجیدگی سے بولے گئے ہوں۔

طلاق کنایہ ایسے الفاظ کے ذریعے دی گئی طلاق کو کہا جاتا ہے جو طلاق کے مفہوم میں واضح نہ ہوں‘ البتہ اگر شوہر ان الفاظ کو بولتے ہوئے طلاق کی نیت کر لے تو طلاق واقع ہو جائے‘ جیسے: توں آزاد ہے، توں فارغ ہے وغیرہ۔ کنایہ الفاظ سے طلاق کا فیصلہ کرنے کے لیے بولنے والے کی نیت یا قرینہ (صورتحال) معلوم کرنا ضروری ہے۔ اگر کنایہ کا لفظ طلاق کی نیت سے بولا گیا ہو یا طلاق کا قرینہ پایا جائے تو طلاق واقع ہوگی ورنہ نہیں۔

واللہ و رسولہ اعلم بالصواب۔

Print Date : 12 November, 2019 02:52:24 PM

Taken From : https://www.thefatwa.com/urdu/questionID/4687/