Fatwa Online

اگر مقتدی بےہوش ہو جائے تو کیا نماز توڑ کر اس کی مدد کی جائے گی؟

سوال نمبر:4626

پہلی صف میں اگر کوئی مقتدی گر کر بےہوش ہو جائے تو کیا کچھ لوگ نماز توڑ کر اس کی مدد کر سکتے ہیں؟ اگر کرسکتے ہیں اسکو صف سے باہر نکالنے کا طریقہ کیا ہوگا؟

سوال پوچھنے والے کا نام: عبدالرزاق

  • مقام: گریدھی، ہندوستان
  • تاریخ اشاعت: 24 جنوری 2018ء

موضوع:نمازِ باجماعت کے احکام و مسائل  |  نماز

جواب:

دورانِ نماز اگر کوئی شخص بےہوش ہو جائے تو نماز توڑ کر اس کو جلد از جلد ہسپتال منتقل کیا جائے گا تاکہ اس کی جان بچائی جا سکے۔ خدا تعالیٰ کی نظر میں ایک انسان کی جان بچانا ساری انسانیت کی جان بچانے کے مترادف ہے۔ کوشش کی جائے گی کہ کم سے کم نمازی اس سے متاثر ہوں۔ اس دوران اگر نمازیوں کے سامنے سے بھی گزرنا پڑے تو کوئی حرج نہیں‌، کیونکہ یہ ہنگامی حالت (state of emergency) ہے اور ہنگامی حالات میں کچھ احکام کی رخصت ہوتی ہے۔

واللہ و رسولہ اعلم بالصواب۔

مفتی:محمد شبیر قادری

Print Date : 24 July, 2021 03:49:13 AM

Taken From : https://www.thefatwa.com/urdu/questionID/4626/