Fatwa Online

مفقود الخبر شوہر کی بیوی کی دوسری شادی کا کیا حکم ہے؟

سوال نمبر:4174

اگر کوئی شخص لا پتہ ہو جائے کیا اس کی زوجہ دوسری جگہ شادی کر سکتی ہے؟ اگر شادی کرنا جائز ہے تو پہلا شوہر واپس آجائے تو کیا حکم ہے؟

سوال پوچھنے والے کا نام: قاضی عاقب

  • مقام: پاکستان
  • تاریخ اشاعت: 02 مارچ 2017ء

موضوع:نکاح

جواب:

جس عورت کا خاوند مفقود الخبر ہو وہ مالکی مسلک کے مطابق چار سال تک انتظار کر کے کسی اور جگہ حسب منشاء عقد نکاح کر سکتی ہے۔

احناف کا فتوی آج کل اسی قول پر ہے۔ لہٰذا مذکورہ عورت کو مجسٹریٹ کے روبرو پیش ہو کر اور اپنے خاوند کے مفقود الخبر ہونے کا ثبوت دے کر، دوسری شادی کا اجازت نامہ حاصل کر کے دوسری شادی کر لینی چاہیے۔ جب شادی کا حکم بھی معلوم ہو گیا اور مجسٹریٹ کا اجازت نامہ بھی مل گیا تو پہلے شوہر کے واپس آنے کی صورت میں بھی کوئی مسئلہ پیدا نہیں ہو گا۔ کیونکہ اس طرح شرعی مسئلہ کو ریاستی تحفظ حاصل ہو گا۔ یہ عورت دوسرے خاوند کی ہی بیوی رہے گی۔ پہلے سے کوئی تعلق نہ ہو گا۔ البتہ پہلے کے ذمے اگر حق مہر یا چار سال کا خرچہ واجب الادا ہے، عورت چاہے بذریعہ عدالت وصول کرے، چاہے تو معاف کرسکتی ہے۔

واللہ و رسولہ اعلم بالصواب۔

مفتی:عبدالقیوم ہزاروی

Print Date : 06 March, 2021 06:29:31 PM

Taken From : https://www.thefatwa.com/urdu/questionID/4174/