Fatwa Online

اسلام میں وجد کا کیا حکم ہے؟

سوال نمبر:3932

کیا وجد اسلام میں جائز ہے؟

سوال پوچھنے والے کا نام: اقراء نواز

  • مقام: پاکستان
  • تاریخ اشاعت: 16 جون 2016ء

موضوع:رقص و وجد

جواب:

وجد ایک ایسا روحانی جذبہ ہے جو اللہ تعالیٰ کی طرف سے باطنِ انسانی پر وارد ہوتا ہے جس کے نتیجہ میں خوشی یا غم کی کیفیت پیدا ہوتی ہے۔ اس جذبے کے وارد ہونے سے باطن کی ہیت بدل جاتی ہے اور اس کے اندر رجوع اِلَی اللہ کا شوق پیدا ہوتا ہے۔ گویا وجد ایک قسم کی راحت ہے، یہ اس شخص کو حاصل ہوتی ہے جس کی صفات نفس مغلوب ہوں اور اس کی نظریں اللہ تعالٰی کی طرف لگی ہوں۔ اس کی مزید وضاحت کے لیے ملاحظہ کیجیے:

اسلام میں‌ سُر، ساز اور وجد و رقص کا کیا حکم ہے؟

واللہ و رسولہ اعلم بالصواب۔

مفتی:محمد شبیر قادری

Print Date : 27 January, 2020 11:16:04 AM

Taken From : https://www.thefatwa.com/urdu/questionID/3932/