Fatwa Online

کیا بینک سے ملنے والا نفع صدقہ کیا جاسکتا ہے؟

سوال نمبر:3841

السلام علیکم مفتی صاحب! بینک میں‌ میرا نفع و نقصان شراکتی کھاتا ہے، جس میں موجود رقم پر بینک نے مجھے نفع کی کچھ رقم دی ہے۔ یہ رقم میں اپنے لیے استعمال نہیں کرنا چاہتا۔ کیا یہ رقم کسی ضرورت مند کو دی جاسکتی ہے؟ اور کیا مجھے یہ اکاؤنٹ رکھانا چاہیے یا تبدیل کر لوں؟

سوال پوچھنے والے کا نام: نوید نود

  • مقام: راولپنڈی
  • تاریخ اشاعت: 14 مارچ 2016ء

موضوع:نفع و نقصان شراکتی کھاتہ  |  جدید فقہی مسائل

جواب:

نفع و نقصان کی بنیاد پر بینک کے ساتھ شراکت کرنا مضاربہ کہلاتا ہے، جو کہ شرعاً جائز ہے۔ اس سے حاصل ہونے والی رقم سود نہیں بلکہ نفع ہے۔ اگر آپ یہ رقم استعمال نہیں کرنا چاہتے تو کسی ضرورت مند کو دے سکتے ہیں، اللہ کے ہاں اجر پائیں گے۔

واللہ و رسولہ اعلم بالصواب۔

مفتی:محمد شبیر قادری

Print Date : 05 August, 2021 02:00:01 PM

Taken From : https://www.thefatwa.com/urdu/questionID/3841/