Fatwa Online

سودی رقم سے بنے ہوئے مکان کو فروخت کرنا کیسا ہے؟

سوال نمبر:2231

السلام علیکم میرا سوال یہ ہے کہ میں نے عسکری بینک سے 19 لاکھ روپے قرض لیے ہیں گھر بنانے کے لیے جبکہ بینک کو میں نے 24 لاکھ روپے واپس کرنے ہیں ماہانہ 10000 روپے کے حساب سے قسط دیتا ہوں۔ میری راہنمائی فرمائیں کہ یہ سود ہے۔ گھر بن چکا ہے کیا میں اس کو فروخت کر کے اپنی جان چھڑا لوں؟

سوال پوچھنے والے کا نام: ایاز علی

  • مقام: گجرانوالہ
  • تاریخ اشاعت: 16 اکتوبر 2012ء

موضوع:سود

جواب:

آپ نے بنک سے جو قرض لیا اس کی واپسی اضافہ بطور شرط کے ساتھ ہے۔ یعنی متعین اضافے کے ساتھ متعین مدت میں واپس کرنا ہے یہ سود ہے۔ اس لیے بہتر ہے کہ مکان فروخت کر کے جان چھڑا لیں۔

واللہ و رسولہ اعلم بالصواب۔

مفتی:محمد شبیر قادری

Print Date : 15 December, 2019 10:23:11 AM

Taken From : https://www.thefatwa.com/urdu/questionID/2231/