لاؤڈ سپیکر پر ذکر اذکار کا کیا حکم ہے؟

سوال نمبر:5505
السلام علیکم! ہمارے یہاں مسجد میں صبح نمازِ فجر، تسبیح و دعا کے بعد پانچ چھ لوگ سپیکر کھول کر ’اللہ ہُو‘ کا ذکر شروع کر دیتے ہیں۔ ہمسائے میں جو لوگ مسجد بننے سے پہلے کے رہائش پذیر ہیں انہوں نے کئی بار گزارش کی کہ اس سے اہلِ محلہ کو خاص طور پر بچوں، بزرگوں اور بیماروں کو پریشانی ہوتی ہے۔ براہ مہربانی اس حوالے سے قرآن و حدیث کی تعلیمات سے راہنمائی فرما دیں۔ شکریہ

  • سائل: اظہر حسین قادریمقام: کلرسیداں، راولپنڈی
  • تاریخ اشاعت: 07 ستمبر 2019ء

زمرہ: ذکر بالجہر (نماز کے بعد بلند آواز سے ذکر کرنا)

جواب:

اسلام دینِ فطرت ہے، اس کے اوامر و نواہی میں انسانی فطرت اور نفسیات کا خاص خیال رکھا گیا ہے۔ اسلام کے احکام اعتدال پر مبنی ہیں، اعمال کی حدود و قیود متعین ہیں اور اعتقادات افراط و تفریط سے خالی ہیں۔ دنیاوی زندگی کے تمام امور میں‘ خواہ وہ عبادات ہوں یا معاملات، معاش ہو یا اخلاق‘ سب میں اللہ کو اعتدال اور میانہ روی پسند ہے۔

مساجد میں لاؤڈ سپیکر کے استعمال میں بھی اسی میانہ روی اور اعتدال کے اصول کو مدِ نظر رکھنا ضروری ہے۔ مساجد میں لاؤڈ سپیکر کا استعمال اسی قدر ہونا چاہیے کہ نماز پنجگانہ کی اذان کی آواز اہلِ علاقہ تک پہنچ سکے، اس کے علاوہ کبھی کبھار سپیکر کا استعمال بقدرِ ضرورت ہو جس سے اہلِ محلہ کو تکلیف نہ پہنچے۔ شریعت نے تو فرض عبادات کی ادائیگی میں بھی دوسروں کو تکلیف پہنچانے سے منع کیا ہے۔ حضرت قيس رضی اللہ عنہ کا بیان ہے کہ حضرت ابو مسعود رضی اللہ عنہ نے بتایا کہ ایک شخص رسول اللہ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کی بارگاہ میں عرض گزار ہوا:

وَاللَّهِ يَا رَسُولَ اللَّهِ إِنِّي لَأَتَأَخَّرُ عَنْ صَلاَةِ الغَدَاةِ مِنْ أَجْلِ فُلاَنٍ مِمَّا يُطِيلُ بِنَا، فَمَا رَأَيْتُ رَسُولَ اللَّهِ صَلَّى اللهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ فِي مَوْعِظَةٍ أَشَدَّ غَضَبًا مِنْهُ يَوْمَئِذٍ، ثُمَّ قَالَ: إِنَّ مِنْكُمْ مُنَفِّرِينَ، فَأَيُّكُمْ مَا صَلَّى بِالنَّاسِ فَلْيَتَجَوَّزْ، فَإِنَّ فِيهِمُ الضَّعِيفَ وَالكَبِيرَ وَذَا الحَاجَةِ.

یا رسول اللہ! خدا کی قسم، میں صبح کی نماز سے فلاں کی وجہ سے رہ جاتا ہوں جو ہمیں لمبی نماز پڑھاتے ہیں۔ میں نے رسول اللہ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کو نصیحت کرنے میں اس روز سے زیادہ ناراض نہیں دیکھا۔ آپ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے فرمایا کہ تم میں سے کچھ لوگ نفرت دلانے والے ہیں۔ لہٰذا جو تم میں سے لوگوں کو نماز پڑھائے تو اُسے ہلکی پڑھانی چاہیے کیونکہ ان میں کمزور، بوڑھے اور ضرورت مند بھی ہوتے ہیں۔

  1. بخاري، الصحيح، كتاب الجماعة والإمامة، باب تخفيف الإمام في القيام وإتمام الركوع والسجود، 1: 248، رقم: 670، بيروت: دار ابن كثير اليمامة
  2. مسلم، الصحيح، كتاب الصلاة، باب أمر الأئمة بتخفيف الصلاة في تمام، 1: 340، رقم: 466، بيروت: دار إحياء التراث العربي

اور حضرت ابو ہریرہ رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے فرمایا:

إِذَا صَلَّى أَحَدُكُمْ لِلنَّاسِ، فَلْيُخَفِّفْ، فَإِنَّ مِنْهُمُ الضَّعِيفَ وَالسَّقِيمَ وَالكَبِيرَ، وَإِذَا صَلَّى أَحَدُكُمْ لِنَفْسِهِ فَلْيُطَوِّلْ مَا شَاءَ.

جب تم میں سے کوئی لوگوں کو نماز پڑھائے تو ہلکی پڑھائے کیونکہ ان میں کمزور، بیمار اور بوڑھے بھی ہوتے ہیں اور جب تم میں سے کوئی تنہا نماز پڑھے تو اسے جتنا چاہے طول دے۔

  1. بخاري، الصحيح، كتاب الجماعة والإمامة، باب إذا صلى لنفسه فليطول ما شاء، 1: 248، رقم: 671
  2. مسلم، الصحيح، كتاب الصلاة، باب أمر الأئمة بتخفيف الصلاة في تمام، 1: 341، رقم: 467

رسول اللہ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے قرآنِ مجید کی تلاوت کرتے ہوئے اکتاہٹ محسوس کرنے پر تلاوت کلام پاک چھوڑ دینے کا فرمایا جیسا کہ حضرت جندب بن عبداللہ رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے فرمایا:

اقْرَءُوا الْقُرْآنَ مَا ائْتَلَفَتْ عَلَيْهِ قُلُوبُكُمْ فَإِذَا اخْتَلَفْتُمْ فَقُومُوا عَنْهُ.

قرآن کریم اس وقت تک پڑھتے رہو جب تک تمہارے دل اس کے ساتھ لگے رہیں اور جب تم اکتاہٹ (تھکاوٹ) محسوس کرو تو اُسے پڑھنا چھوڑ دو۔

  1. بخاري، الصحيح ، كتاب فضائل القرآن، باب اقرؤوا القرآن ما ائتلفت عليه قلوبكم، 4: 1929، رقم: 4774
  2. مسلم، الصحيح، كتاب العلم، باب النهي عن أتباع متشابه القرآن والتحذير من متبعيه والنهي عن الاختلاف في القرآن، 4: 3053، رقم: 2667

اسی طرح روزانہ وعظ سے لوگوں کے اکتا جانے کے ڈر سے ہفتہ میں ایک دن مقرر کرنے کے حوالے سے حضرت ابووائل سے روایت ہے:

كَانَ عَبْدُ اللَّهِ يُذَكِّرُ النَّاسَ فِي كُلِّ خَمِيسٍ فَقَالَ لَهُ رَجُلٌ: يَا أَبَا عَبْدِ الرَّحْمَنِ لَوَدِدْتُ أَنَّكَ ذَكَّرْتَنَا كُلَّ يَوْمٍ؟ قَالَ: أَمَا إِنَّهُ يَمْنَعُنِي مِنْ ذَلِكَ أَنِّي أَكْرَهُ أَنْ أُمِلَّكُمْ، وَإِنِّي أَتَخَوَّلُكُمْ بِالْمَوْعِظَةِ، كَمَا كَانَ النَّبِيُّ صَلَّى اللهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ يَتَخَوَّلُنَا بِهَا، مَخَافَةَ السَّآمَةِ عَلَيْنَا.

حضرت عبداﷲ بن مسعود رضی اللہ عنہ ہر جمعرات کو لوگوں میں وعظ فرمایا کرتے۔ ایک آدمی نے ان سے کہا اے ابو عبدالرحمن! میں چاہتا ہوں کہ آپ روزانہ ہمیں وعظ سے مستفید فرمایا کریں۔ فرمایا کہ ایسا کرنے سے مجھے یہ بات روکتی ہے کہ میں تمہارے اکتا جانے کو نا پسند کرتا ہوں۔ میں نے تم سے وعظ کہنے کے لیے دن مقرر کیا ہوا ہے جیسے نبی کریم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے ہمارے اکتا جانے کے ڈر سے، ہمارے لیے مقرر فرمایا ہوا تھا۔

بخاري، الصحيح، كتاب العلم، باب من جعل لأهل العلم أياما معلومة، 1: 39، رقم: 70

مذکورہ احادیث کے علاوہ بھی بہت سی احادیث پیش کی جاسکتی ہیں جن میں لوگوں کے لیے آسانی پیدا کرنے کا درس دیا گیا ہے۔ فرض نماز لمبی پڑھانے کی وجہ سے رسول اللہ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کی ناراضی کو ہی بنیاد بنایا جائے تو روزانہ لاؤڈ سپیکر کھول کر محفلِ ذکر کی قطعاً اجازت نہیں ہے۔ مسجد میں اللہ تعالیٰ کا ذکر کرنے میں کوئی حرج نہیں ہے لیکن اہلِ محلہ کے آرام و سکون، بچوں بوڑھوں اور بیماروں کا خیال رکھنا ہمارا اخلاقی و دینی فریضہ ہے۔ اس لیے سپیکر پر ذکر کرنے سے اجتناب کرنا چاہیے۔

واللہ و رسولہ اعلم بالصواب۔

مفتی: عبدالقیوم ہزاروی

اہم سوالات
  • بٹ کوئن کی ٹریڈنگ کا کیا حکم ہے؟
  • قطع تعلقی کرنے والے رشتے داروں سے صلہ رحمی کا کیا حکم ہے؟
  • مزارات پر پھول چڑھانے اور چراغاں کرنے کا کیا حکم ہے؟