مسلمان عورتوں کا سِندور لگانا کیسا ہے؟

سوال نمبر:5428
مسلمان عورتوں کا سیندور لگانا کیسا ہے؟

  • سائل: محمد ارشد خانمقام: لکھنو، ہندوستان
  • تاریخ اشاعت: 01 مئی 2019ء

زمرہ: معاشرت

جواب:

عورتوں کے لیے زینت اختیا رکرنا بلاشبہ جائز ہے، مگر غیرمسلم اقوام کی خاص مذہبی علامات کی نقالی کرنا یا ان کا طریقہ اختیار کرنا درست نہیں۔حضرت عبداللہ بن عمر رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے فرمایا:

من تشبه بقوم فهو منهم.

جس نے کسی قوم کی مشابہت اختیار کی وہ اسی میں سے ہے۔

سنن أبي داؤد، کتاب اللباس، باب في لبس الشهرة، 2: 559، رقم: 4031،

سندور ہندو قوم کا مذہبی شعار ہے، ہندؤوں کے ہاں مختلف مذہبی رسومات کی ادائیگی اور شادی و پوجا کے وقت سندور کا استعمال کیا جاتاہے۔ سندور لگانا کیونکہ ہندؤوں کا مخصوص اور مذہبی عمل ہے، اس لیے مسلمان عورتوں کے لئے سِندور لگانا جائز نہیں۔

واللہ و رسولہ اعلم بالصواب۔

اہم سوالات
  • بٹ کوئن کی ٹریڈنگ کا کیا حکم ہے؟
  • قطع تعلقی کرنے والے رشتے داروں سے صلہ رحمی کا کیا حکم ہے؟
  • مزارات پر پھول چڑھانے اور چراغاں کرنے کا کیا حکم ہے؟