Fatwa Online Durood-e-Minhaj
Home Latest Questions Most Visited Ask Scholar
   
فتویٰ آن لائن - کیا عقدِ ثانی کے لیے پہلی بیوی کی اجازت ضروری ہے؟

کیا عقدِ ثانی کے لیے پہلی بیوی کی اجازت ضروری ہے؟

موضوع: نکاح   |  معاشرتی آداب

سوال پوچھنے والے کا نام: خورشید احمد       مقام: حیدراباد ہند

سوال نمبر 4526:
نکاح ثانی کے لئے زوجہ اول سے اجازت ضروری ہے؟ اجازت نہ ملنے کی صورت میں دوسری شادی جائز ہے؟ قرآن و حدیث کی روشنی میں جواب عنایت فرمائیں۔

جواب:

شرعی طور پر دوسری شادی کے لیے پہلی بیوی سے اجازت لینا ضروری نہیں ہے۔ قرآن مجید میں اللہ تعالیٰ کا ارشاد ہے:

فَانكِحُواْ مَا طَابَ لَكُم مِّنَ النِّسَاءِ مَثْنَى وَثُلاَثَ وَرُبَاعَ.

’ان عورتوں سے نکاح کرو جو تمہارے لئے پسندیدہ اور حلال ہوں، دو دو اور تین تین اور چار چار (مگر یہ اجازت بشرطِ عدل ہے)‘

(النِّسَآء، 4: 3)

یہ آیت کریمہ مطلق ہے، اس میں دوسری، تیسری یا چوتھی شادی کے لیے کسی بیوی کی اجازت کی کوئی قید نہیں ہے، تاہم اگر بیویوں کے درمیان انصاف نہ کرسکنے کا اندیشہ ہو تو ایک سے زائد شادی کی اجازت نہیں ہے۔

اگرچہ شرعی طور پر دوسری شادی کے لیے پہلی بیوی سے اجازت لینا لازم نہیں ہے‘ تاہم پاکستانی قوانین ’مسلم فیملی لاء آرڈیننس مجریہ 1961‘ کے تحت یہ قانونی تقاضا ہے۔ ’مسلم فیملی لاء‘ کے مطابق پہلی بیوی کی اجازت کے بغیر دوسری شادی قانوناً جرم ہے جس کی سزا 6 ماہ قید اور 2 لاکھ روپے جرمانہ ہے۔ اس لیے مناسب ہے کہ دوسری شادی کے لیے پہلی بیوی سے مشاورت و اجازت لی جائے تاکہ قانونی تقاضا بھی پورا ہو جائے اور مستقبل میں کسی قسم کی بدمزگی کا سامنا بھی نہ کرنا پڑے۔

واللہ و رسولہ اعلم بالصواب۔

مفتی: محمد شبیر قادری

تاریخ اشاعت: 2017-11-18


Your Comments