Fatwa Online Durood-e-Minhaj
Home Latest Questions Most Visited Ask Scholar
  وطن سے محبت کی شرعی حیثیت کیا ہے؟ 
فتویٰ آن لائن - کیا تقریر، وعظ یا تبلیغ کا معاوضہ لینا جائز ہے؟

کیا تقریر، وعظ یا تبلیغ کا معاوضہ لینا جائز ہے؟

موضوع: معاملات  |  متفرق مسائل

سوال پوچھنے والے کا نام: محمد میزان الرحمٰن       مقام: ہندوستان

سوال نمبر 4245:
کیا تقریر، وعظ یا تبلیغ کا معاوضہ لینا جائز ہے؟

جواب:

دعوت و ارشاد اور تقریر و تبلیغ پیغمبرانہ ذمہ داری ہے۔ خدا تعالیٰ کے پیغمبر علیھم السلام اپنی قوم کو وعظ و تبلیغ کرتے تو فرماتے:

َمَا سَأَلْتُكُم مِّنْ أَجْرٍ إِنْ أَجْرِيَ إِلاَّ عَلَى اللّهِ.

میں نے تم سے کوئی معاوضہ تو نہیں مانگا، میرا اجر تو صرف اللہ (کے ذمۂ کرم) پر ہے۔

يُوْنـُس، 10: 72

سورہ یاسین میں اللہ تعالیٰ نے اپنے نیک بندے کی گفتگو کو ان الفاظ میں بیان کیا ہے کہ:

وَجَاءَ مِنْ أَقْصَى الْمَدِينَةِ رَجُلٌ يَسْعَى قَالَ يَا قَوْمِ اتَّبِعُوا الْمُرْسَلِينَ. اتَّبِعُوا مَن لاَّ يَسْأَلُكُمْ أَجْرًا وَهُم مُّهْتَدُونَ.

اور شہر کے پرلے کنارے سے ایک آدمی دوڑتا ہوا آیا، اس نے کہا: اے میری قوم! تم پیغمبروں کی پیروی کرو۔ ایسے لوگوں کی پیروی کرو جو تم سے کوئی معاوضہ نہیں مانگتے اور وہ ہدایت یافتہ ہیں۔

يٰس، 36: 20-21

گویا پیغمبرانہ طرزِ عمل یہ ہے کہ دعوت الی اللہ کی ذمہ داری کی ادائیگی کے عوض لوگوں سے کسی قسم کا معاوضہ اور بدلہ نہ مانگا جائے اور تقریری و تبلیغ کے لیے لوگوں سے کسی قسم کے بدلے یا فائدے کا سوال نہ کیا جائے۔ بلکہ یہ ذمہ داری خدا کے پیغمبروں‌ کی طرح محض خدا کی رضا، جذبہ اصلاح‌ اور خدمتِ دین سمجھ کر ادا کی جائے اور اس کا اجر خدا تعالیٰ پر چھوڑ دیا جائے۔

علماء، خطباء، مقررین، مدرسین، آئمہ اور مؤذن جو عوض، اجرت یا معاوضہ لیتے ہیں وہ (معاذاللہ) دین کی خرید و فروخت نہیں ہے، بلکہ پابندئ وقت کا ’حق الخدمت‘ ہے۔ یہ تمام خدمات بلاشبہ اللہ کی رضا کے لیے ہونی چاہئیں، لیکن سلسلہ خدمات کو جاری رکھنے کے لیے بوقتِ ضرورت مناسب وظیفہ لینے میں کوئی حرج نہیں۔ دورِ حاضر میں یہ ایک ضرورت بھی ہے، اگر درمیان سے اسے اٹھا دیا جائے تو دینی فرائض کی ترویج اور نشر و اشاعت کا سلسلہ رک جائے گا، کیونکہ ہر شخص تقویٰ اور خشیت الٰہی کے پیغمبرانہ معیار پر نہیں ہوتا۔ اگر کوئی شخص صاحبِ مال و صاحب استطاعت ہے تو اسے یہ خدمات فی سبیل اللہ ادا کرنی چاہئیں۔ علامہ شامی فرماتے ہیں:

ان المتقدمين منعوا أخذا الأجره علی الطاعات، وأفتی المتأخرون بجوازه علی التعليم والامامة... کان مذهب المتاخرين هو المفتی به.

متقدمین علماء نے عبادات پر اجرت لینے کو منع کیا، اور متاخرین علماء نے تعلیم وامامت پر اجرت جائز ہونے کا فتوی دیا ہے۔۔۔ اور فتوی متاخرین کے مذہب پر دیا جاتا ہے۔

ابن عابدین شامي، رد المحتار، 4 : 417، بيروت: دار الفكر

چونکہ مسلمانوں کی رفاہ کے لیے کام کرنے اور زکوٰۃ اور ٹیکس وصول کرنے والے شخص کو مالدار ہونے کے باوجود ان اموال سے استفادہ کرنا جائز ہے، اس لیے مقررین، مبلغین اور داعی کے حضرات بقدرضرورت تنخواہ لینے میں کوئی حرج نہیں۔ لیکن دینی خدمت سرانجام دینے والوں کے ہاں اصل استغناء، لوگوں کے سامنے دستِ سوال دراز کرنے سے گریز کرنا اور ان سے کسی بھی قسم کی امید وابستہ کرنے سے احتراز کرنا بہتر ہے۔

واللہ و رسولہ اعلم بالصواب۔

مفتی: محمد شبیر قادری

تاریخ اشاعت: 2017-05-20


Your Comments