Fatwa Online Durood-e-Minhaj
Home Latest Questions Most Visited Ask Scholar
   
فتویٰ آن لائن - اگر شوہر طلاق کو دو شرائط کے ساتھ مشروط کرے تو طلاق کا کیا حکم ہے؟

اگر شوہر طلاق کو دو شرائط کے ساتھ مشروط کرے تو طلاق کا کیا حکم ہے؟

موضوع: طلاق   |  تعلیق طلاق

سوال پوچھنے والے کا نام: رحمت علی       مقام: کراچی

سوال نمبر 4129:
ایک شادی شدہ عورت نے زنا کیا جس کی وجہ اس نے شوہر کی بےاعتنائی بتائی۔ ضمیر کی خلش پر بالآخر اس نے یہ بات 7 سال بعد اپنے شوہر کو بتا دی۔ اسی دوران شوہر نے دو مرتبہ ایک ایک کر کے اسے مشروط طلاق دی۔ شوہر نے طلاق کے الفاظ اس طرح‌ کہے کہ اگر تم کسی غیر مرد سے ملی تو تمہیں ایک طلاق، اگر تم نے کسی مرد سے جسمانی تعلق قائم کیا تو تمہیں دوسری واقع ہوجائے گی۔ اس صورت میں نکاح کا کیا حکم ہے؟

جواب:

جب طلاق کو کسی شرط کے ساتھ مشروط کیا جائے تو اسے ’طلاقِ مشروط‘ کہتے ہیں۔ اس کے بارے میں قاعدہ یہ ہے کہ:

و اذا اضافه الیٰ شرط وقع عقيب الشرط.

جب شرط پائی جائے گی تو طلاق واقع ہو جائے گی۔

الشيخ نظام و جماعة من علماء الهند، الفتاویٰ الهنديه،1: 420، دارالفکر

امام مرغینانی فرماتے ہیں:

و ألفاظ الشرط إن و إذا و إذا ما وکل و کلما ومتی و متی ما ففی هذه الألفاظ إذا وجد الشرط انحلت.

"جب" اور "اگر" کے الفاظ کے ذریعے طلاق کو مشروط کیا گیا تھا تو شرط پائی جانے سے طلاق واقع ہو جائے گی۔

مرغيناني، بداية المبتدي، 1: 74، القاهرة، مكتبة ومطعبة محمد علي صبح

اس لیے شوہر جب طلاق کو کسی شرط کے ساتھ مشروط کرے تو شرط پائے جانے کی صورت میں طلاق واقع ہوجاتی ہے۔ مسئلہ مسؤلہ میں آپ نے بتایا کہ شوہر نے دو شرائط لگائی ہیں:

  1. اگر بیوی کسی سے ملی تو اسے طلاق
  2. اگر بیوی نے کسی سے جسمانی تعلق قائم کیا تو اسے طلاق

ان میں سے دوسری شرط تو واضح ہے کہ اگر بیوی نے کسی غیرمرد سے جسمانی تعلق قائم کیا تو ایک طلاق واقع ہو جائے گی، تاہم پہلی شرط مبہم ہے۔ اس ابہام کی وضاحت ضروری ہے کہ شوہر نے ’ملنے‘ سے کیا مراد لیا؟ کیا ملنے سے مراد سلام کرنا، خیریت دریافت کرنا یا حال و احوال پوچھنا ہے؟ یا اس سے مراد دوستی اور بات چیت ہے؟ شوہر نے شرط عائد کرتے ہوئے ان میں سے جو بھی معنیٰ و مراد لیا تھا اس کے پائے جانے پر طلاق واقع ہو جائے گی۔

لہٰذا جب بھی کوئی شرط پائی جائے گی تو ایک طلاق واقع ہو جائے گی۔ بصورتِ مسئلہ اگر بیوی نے دونوں کام کر دیے ہیں تو دو طلاقیں واقع ہو گئی ہیں۔ دورانِ عدت باہمی رضامندی سے رجوع ہوسکتا ہے یا عدت کے بعد وہ دوبارہ نکاح کر کے اکٹھے رہ سکتے ہیں۔ اس صورت میں‌ شوہر کے پاس طلاق کا ایک حق باقی رہ جائے گا۔

واللہ و رسولہ اعلم بالصواب۔

مفتی: محمد شبیر قادری

تاریخ اشاعت: 2017-02-16


Your Comments