Fatwa Online Durood-e-Minhaj
Home Latest Questions Most Visited Ask Scholar
   
فتویٰ آن لائن - زمین کی مالیت پر زکوٰۃ کی ادائیگی کا کیا حکم ہے؟

زمین کی مالیت پر زکوٰۃ کی ادائیگی کا کیا حکم ہے؟

موضوع: زکوۃ  |  شرائط وجوب زکوۃ

سوال پوچھنے والے کا نام: نذر حسن       مقام: بورے والا

سوال نمبر 3948:
السلام علیکم! کیا کاروبار میں لگائے گئے سرمایہ پر زکوٰۃ ادا کرنا واجب ہے؟ میں نے ایک پلاٹ‌ لیا ہے جس کی مالیت دس لاکھ ہے، جسے میں آٹھ یا دس مہینوں تک بیچنے کا ارادہ رکھتا ہوں کیا اس پر بھی زکوٰۃ ادا کی جائے گی؟

جواب:

کاروبار میں لگائے جانے والے سرمائے سے خریدے گئے سامانِ تجارت، خام مال یا تیار مال کی مارکیٹ ریٹ کے مطابق قیمت پر زکوٰۃ ادا کی جائے گی۔ اگر آپ سال بھر صاحبِ نصاب رہیں تو پلاٹ فروخت کرنے کی صورت میں اس رقم کو بھی نصاب میں شامل کیا جائے گا، خواہ پلاٹ سال کے جس مہینے میں بھی فروخت ہو۔

پلاٹ کی مالیت پر زکوٰۃ ادا نہیں کی جائے گی کیونکہ شرعاً زمین کی قیمت پر زکوٰۃ نہیں ہے۔ اگر زمین پر کوئی چیز کاشت کی جا رہی ہے تو پیداوار پر عشر ہے۔ اس طرح اگر مکان، دکان یا پلاٹ سے کرایہ مل رہا ہے تو حاصل ہونے والی آمدنی کو دیگر مال میں شامل کر کے زکوۃ ادا کی جائے گی۔ صرف زمین، مکان اور پلاٹ پر زکوۃ نہیں ہے، خواہ اس کی مالیت لاکھوں روپے ہو۔

واللہ و رسولہ اعلم بالصواب۔

مفتی: محمد شبیر قادری

تاریخ اشاعت: 2016-07-22


Your Comments