Fatwa Online Durood-e-Minhaj
Home Latest Questions Most Visited Ask Scholar
  وطن سے محبت کی شرعی حیثیت کیا ہے؟ 
فتویٰ آن لائن - ملک میں غیرسودی بینکنگ کی عدم موجودگی کی صورت میں‌ بینکوں‌ سے لین دین کا کیا حکم ہے؟

ملک میں غیرسودی بینکنگ کی عدم موجودگی کی صورت میں‌ بینکوں‌ سے لین دین کا کیا حکم ہے؟

موضوع: جدید فقہی مسائل  |  سود   |  دار الکفر میں سود

سوال پوچھنے والے کا نام: سید رفیق       مقام: ہندستان

سوال نمبر 3900:
السلام علیکم! ہندستان میں بینک سرکاری اور غیرمسلم لوگ چلاتے ہیں۔ ان بینک سے ملنے والا سود یا زائد رقم لینا جائز ہے؟

جواب:
سود کسی ملک میں جائز نہیں۔ اس کی وضاحت کے لیے ملاحظہ کیجیے: کیا دارالکفر میں سود لینا اور دینا جائز ہے؟

بعض ممالک ایسے بھی ہیں جہاں غیرسودی لین دین کی سہولت موجود نہیں۔ ایسے ممالک میں مسلمان سودی بینکوں میں ہی لین دین پر مجبور ہیں۔ مگر یہ ایک استثنائی صورت ہے۔ خنزیر، مردار اور شراب حرام ہیں مگر اِستثنائی صورت میں اسلام کا قانون مختلف ہے۔ ارشادِ باری تعالیٰ ہے:

فَمَنِ اضْطُرَّ غَيْرَ بَاغٍ وَّلاَ عَادٍ فَلَآ اِثْمَ عَلَيْه.

پھر جو شخص سخت مجبور ہو جائے نہ تو نافرمانی کرنے والا ہو اور نہ حد سے بڑھنے والا تو اس پر (زندگی بچانے کی حد تک کھا لینے میں) کوئی گناہ نہیں۔

البقرة، 2: 173

درج بالا آیت مبارکہ میں حلال کی عدم دستیابی کی صورت میں حرام کے استعمال کی اجازت دی جا رہی ہے۔ اس استثنائی حکم سے حرام حلال نہیں ہو جاتا، مگر اس کے استعمال کی اجازت مل جاتی ہے۔ اس لیے غیرسودی لین دین کی سہولت نہ رکھنے والے ممالک میں سود حلال نہیں ہو جاتا، بلکہ اِضطراری حالت ہونے سے کچھ مستثنیات مل جاتی ہیں۔ اگر آپ کے ملک میں غیرسودی بینک موجود نہیں تو آپ زائد رقم لے سکتے ہیں۔ جب بلا سود نظام مہیا ہو جائے تب یہ استثنائی جواز بھی ختم ہو جائے گا۔ جواب کی مزید وضاحت کے لیے ملاحظہ کیجیے:

دارالکفر میں سودی رقوم کا مصرف کیا ہے؟

واللہ و رسولہ اعلم بالصواب۔

مفتی: محمد شبیر قادری

تاریخ اشاعت: 2016-04-21


Your Comments