مورث کے والد اور بیٹیوں کی موجودگی میں‌ وراثت کی تقسیم کیا ہوگی؟

سوال نمبر:3633
السلام علیکم! مفتی صاحب کیا دادا کی موجودگی میں پوتی کو وراثت ملے گی؟ یعنی ایک شخص فوت ہوا اور اس کی اولاد صرف دو بیٹیاں ہیں اور اس کا والد بھی زندہ ہے۔ اس کی وراثت میں‌ سے اس کی بیٹی اور اس کے والد کو کتنا حصہ ملے گا؟

  • سائل: محبوب الٰہی مقام: راولپنڈی
  • تاریخ اشاعت: 25 مئی 2015ء

زمرہ: تقسیمِ وراثت

جواب:

میت کے کفن دفن پر اٹھنے والے اخراجات، قرض (اگر ہے تو اس) کی ادائیگی اور وصیت (اگر کوئی وصیت کی ہے تو) ایک تہائی (1/3) سے پوری کرنے کے بعد بچنے والی منقولہ وغیر منقولہ جائیداد ورثاء میں تقسیم کی جائے گی۔ بقول آپ کے ورثاء میں صرف دو بیٹیاں اور والد ہیں۔

ارشاد باری تعالیٰ ہے:

فَاِنْ کُنَّ نِسَآءً فَوْقَ اثْنَتَيْنِ فَلَهُنَّ ثُلُثَا مَا تَرَکَ ج وَاِنْ کَانَتْ وَاحِدَةً فَلَهَا النِّصْفُ ط وَلِاَبَوَيْهِ لِکُلِّ وَاحِدٍ مِّنْهُمَا السُّدُسُ مِمَّا تَرَکَ اِنْ کَانَ لَه وَلَدٌج فَاِنْ لَّمْ يَکُنْ لَّه وَلَدٌ وَّوَرِثَـه اَبَوٰهُ فَلِاُمِّهِ الثُّلُثُج

’’پھر اگر صرف لڑکیاں ہی ہوں (دو یا) دو سے زائد تو ان کے لیے اس ترکہ کا دو تہائی (2/3) حصہ ہے، اور اگر وہ اکیلی ہو تو اس کے لیے آدھا (1/2) ہے، اور مورث کے ماں باپ کے لیے ان دونوں میں سے ہر ایک کو ترکہ کا چھٹا حصہ (ملے گا) بشرطیکہ مورث کی کوئی اولاد ہو، پھر اگر اس میت (مورث) کی کوئی اولاد نہ ہو اور اس کے وارث صرف اس کے ماں باپ ہوں تو اس کی ماں کے لیے تہائی ہے (اور باقی سب باپ کا حصہ ہے)‘‘۔

النساء، 4: 11

مذکورہ بالا آیت کریمہ کے مطابق کل ترکہ کا دو تہائی (2/3) حصہ دونوں بیٹیوں میں برابر برابر تقسیم ہو جائے گا اور کل کا ہی چھٹا (1/6) حصہ والد کو ملے گا۔

یہاں پر مرحوم کے باپ اور بیٹیوں کو ان کے مقررہ حصے دینے کے بعد باقی بچنے والا مال مرحوم کے باپ کو بطور عصبہ ملے گا۔ جیسا کہ حدیث مبارکہ میں ہے:

عَنِ ابْنِ عَبَّاسٍ رضی اﷲ عنهما عَنِ النَّبِيِّ قَالَ أَلْحِقُوا الْفَرَائِضَ بِأَهْلِهَا فَمَا بَقِيَ فَهُوَ لِاَوْلَی رَجُلٍ ذَکَرٍ

’’حضرت ابن عباس رضی اﷲ عنہما سے روایت ہے کہ نبی کریم صلیٰ اللہ علیہ وآلہ وسلم نے فرمایا کہ میراث اُس کے حق دار لوگوں کو پہنچا دو اور جو باقی بچے تو وہ سب سے قریبی مرد کے لیے ہے‘‘۔

  1. بخاري، الصحيح، 6: 2476، رقم: 6351، دار ابن کثير اليمامة بيروت
  2. مسلم، الصحيح، 3: 1233، رقم: 1615، دار احياء التراث العربي بيروت
  3. ترمذي، السنن، 4: 418، رقم: 2098، دار احياء التراث العربي بيروت

بصورت مسئولہ دونوں بیٹیوں کو کل مال کا دو تہائی (2/3) حصہ ملے گا اور دادا کو چھٹے (1/6) حصے کے ساتھ باقی بچنے والا بھی سارا مال بطور عصبہ ملے گا۔

واللہ و رسولہ اعلم بالصواب۔

مفتی: محمد شبیر قادری

اہم سوالات
  • بٹ کوئن کی ٹریڈنگ کا کیا حکم ہے؟
  • قطع تعلقی کرنے والے رشتے داروں سے صلہ رحمی کا کیا حکم ہے؟
  • مزارات پر پھول چڑھانے اور چراغاں کرنے کا کیا حکم ہے؟