Fatwa Online Durood-e-Minhaj
Home Latest Questions Most Visited Ask Scholar
   
فتویٰ آن لائن - کیا مرشد کے پاوں کو بوسہ دیا جا سکتا ہے؟

کیا مرشد کے پاوں کو بوسہ دیا جا سکتا ہے؟

موضوع: ہاتھ پاؤں چومنا (تقبیل الید والرجل)

سوال پوچھنے والے کا نام: طیب شہزاد       مقام: پنڈی بھٹیاں

سوال نمبر 3188:
السلام علیکم مفتی صاحب! میرا سوال یہ ہے کہ کیا مرشد کے پاوں کو بوسہ دیا جا سکتا ہے؟

جواب:

مرشد اگر شریعت کا پابند ہو، مریدوں کا متلاشی نہ ہو، اللہ اور اس کے رسول ﷺ کے مشن کو فروغ دے رہا ہو، لوگ اس سے دین کا فہم و ادراک پائیں تو ایسے مرشد کے پاوں کو بوسہ دیا جا سکتا ہے۔ آج کے دور میں بہت کم لوگ اس قابل ہیں۔ لہٰذا یہ دیکھنا ضروری ہے کہ جس کو مرشد کہا جا رہا ہے وہ ایسا کہلانے کا حقدار بھی ہے یا نہیں۔

واللہ و رسولہ اعلم بالصواب۔

مفتی: عبدالقیوم ہزاروی

تاریخ اشاعت: 2014-05-20


Your Comments