کسی ملازم کا بروقت کام پر نہ آنے سے کیا اس کی کمائی حرام ہو گی؟

سوال نمبر:2993
السلام علیکم میرا سوال یہ ہے کہ کیا سرکاری استاد کی کمائی حرام ہو گی اگر وہ بچوں کو پڑھاتا ہے تو صحیح ہے مگر اکثر مجبوری کی وجہ دیر سے سکول جاتا ہے اور اس طرح کے کام ہیں؟

  • سائل: محمد آصف جاویدمقام: فیصل آباد
  • تاریخ اشاعت: 10 جنوری 2014ء

زمرہ: مالیات

جواب:

کسی بھی ادارے کے ساتھ آپ کا جتنے وقت کے لیے معاہدہ ہے اگر آپ اس کو اتنا وقت نہیں دیتے۔ اس کے قوانین کے مطابق نہیں چلتے تو وہ کمائی جائز نہیں ہو گی۔ چونکہ کوئی مجبوری ہو تو سرکاری ادارہ ہو یا پرائیویٹ سالانہ چھٹیاں ہوتی ہیں۔ اسی طرح کبھی کبھار کوئی کام پڑ جائے تو سربراہ ادارہ کو اطلاع کر کے کچھ وقت کے لیے جانے کی اجازت بھی ہوتی ہے لیکن مستقل ہی دیر سے آنا اور وقت سے پہلے ہی چلے جانے کی اجازت تو نہیں ہوتی۔ لہذا جو طے ہے اس کے مطابق ہی آنا جانا ضروری ہے، کم وقت دینا جائز نہیں ہے۔

واللہ و رسولہ اعلم بالصواب۔

مفتی: عبدالقیوم ہزاروی

اہم سوالات
  • بٹ کوئن کی ٹریڈنگ کا کیا حکم ہے؟
  • کاروباری شراکت کے اسلامی اصول کیا ہیں؟
  • وطن سے محبت کی شرعی حیثیت کیا ہے؟