کیا سحری کھائے بغیر روزہ رکھ سکتے ہیں؟

سوال نمبر:2709
السلام علیکم میرا سوال یہ ہے کہ کیا سحری کھائے بغیر روزہ رکھ سکتے ہیں؟

  • سائل: اکبر علیمقام: اسپین
  • تاریخ اشاعت: 24 اگست 2013ء

زمرہ: عبادات  |  روزہ  |  سحر و افطار کے احکام

جواب:

سحری کھانا سنت رسول صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم ہے۔ کیونکہ آپ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے سحری کھانے کا حکم فرمایا اور اس کے فضائل وبرکات اور اہمیت بھی بیان فرمائی جیسا کہ حدیث مبارکہ میں ہے کہ :

1. حدثنا عبد العزيز بن صهيب قال سمعت أنس بن مالک رضی الله عنه قال قال النبی صلی الله عليه وآله وسلم تسحروا فان فی السحور برکة.

عبد العزیز بن صہیب نے حضرت انس بن مالک رضی اللہ عنہ سے سنا کہ نبی کریم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے فرمایا : سحری کھایا کرو کیونکہ سحری میں برکت ہے۔

  1. بخاری، الصحیح، 2 : 678، رقم : 1823، دار ابن کثیر الیمامۃ بیروت
  2. مسلم، الصحیح، 2 : 770، رقم : 1096، دار احیاء التراث العربی بیروت۔
  3. احمد بن حنبل، المسند، 3 : 229، رقم : 13414، مؤسسۃ قرطبۃ مصر
  4. ترمذی، السنن، 3 : 88، رقم : 708، دار احیاء التراث العربی بیروت
  5. ابن ماجہ، السنن، 1 : 540، رقم : 1692، دار الفکر بیروت
  6. دارمی : السنن، 2 : 11، رقم : 1696، دار الکتاب العربی بیروت
  7. بزار، المسند، 8 : 257، رقم : 3321، مؤسسۃ علوم القرآن مکتبۃ بیروت، المدینۃ
  8. نسائی، السنن الکبری، 2 : 75، رقم : 2454، دار الکتب العلمیۃ بیروت
  9. ابی یعلی، المسند، 5 : 235، رقم : 2848، دار المامون للتراث دمشق
  10. ابن خزیمۃ، الصحیح، 3 : 213، رقم : 1936، المکتب الاسلامی بیروت
  11. ابن حبان، الصحیح، 8 : 245، رقم : 3466، مؤسسۃ الرسالۃ بیروت
  12. عبد الرزاق، المصنف، 4 : 227، رقم : 7598، المکتب الاسلامی بیروت
  13. ابن ابی شیبۃ، المصنف، 2 : 274، رقم : 8913، مکتبۃ الرشد الریاض
  14. ابن جعد، المسند، 1 : 215، رقم : 1425، مؤسسۃ نادر بیروت
  15. ابی عوانۃ، المسند، 2 : 177، رقم : 2737، دار المعرفۃ بیروت
  16. ابن جارود، المنتقی، 1 : 104، رقم : 383، مؤسسۃ الکتاب الثقافیۃ بیروت
  17. طبرانی، المعجم الاؤسط، 2 : 296، رقم : 2028، دار الحرمین القاہرۃ

2. عن عمرو بن العاص أن رسول الله صلی الله عليه وآله وسلم قال فصل ما بين صيامنا وصيام أهل الکتاب أکلة السحر.

حضرت عمرو ابن العاص رضی اللہ عنہ بیان کرتے ہیں کہ حضور صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے فرمایا ہمارے اور اہل کتاب کے روزے میں صرف سحری کھانے کا فرق ہے۔

  1. مسلم، الصحیح، 2 : 770، رقم : 1096
  2. احمد بن حنبل، 4 : 197، رقم : 708
  3. ابی داؤد، السنن، 2 : 302، رقم : 2343، دار الفکر
  4. ترمذی، السنن، 3 : 88، رقم : 708
  5. دارمی، السنن، 2 : 11، رقم : 1697
  6. ابی یعلی، المسند، 13 : 1322 رقم : 7337
  7. عبد الرزاق، المصنف، رقم : 7602
  8. ابن ابی شیبۃ، المصنف، 2 : 275، رقم : 8915
  9. نسائی، السنن الکبری، 2 : 80، رقم : 2476
  10. ابی عوانۃ، المسند، 2 : 179، رقم : 2756

3. عن العرباض بن سارية قال دعانی رسول الله صلی الله عليه وآله وسلم الی السحور فی رمضان فقال هلم الی الغداء المبارک.

حضرت عرباض بن ساریہ رضی اللہ عنہ نے فرمایا کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے مجھے سحری کھانے کے لیے بلایا تو فرمایا آؤ صبح کا کھانا کھا لو جو بڑی برکت والا ہوتا ہے۔

  1. احمد بن حنبل، المسند، 4 : 126، رقم : 17183
  2. ابی داؤد، السنن، 2 : 303، رقم : 2344

مذکورہ بالا احادیث مبارکہ سے سحری کھانے کی ضرورت واہمیت اور سنت ہونا ثابت ہے۔ لہذا جو سحری نہیں کھائے گا خلاف سنت عمل کرے گا۔ ہاں اگر کسی وجہ سے سحری نہ کھا سکے اور سحری کا وقت گزر جائے تو نیت کر لے، کچھ کھائے پیئے بغیر بھی روزہ ہو جائے گا۔

واللہ و رسولہ اعلم بالصواب۔

مفتی: عبدالقیوم ہزاروی

اہم سوالات
  • بٹ کوئن کی ٹریڈنگ کا کیا حکم ہے؟
  • کاروباری شراکت کے اسلامی اصول کیا ہیں؟
  • وطن سے محبت کی شرعی حیثیت کیا ہے؟