کیا بہو پر ساس کی خدمت کرنا فرض ہے؟

سوال نمبر:2387
السلام علیکم میرا سوال یہ ہے کہ میری بیوی کہتی ہے کہ اسلام نے ساس کی خدمت کرنے کا نہیں کہا ہے اور میں ساس کی خدمت صرف اس لیے کرتی ہوں کہ آپ میرے خاوند ہیں اور آپ کا کہا مجھے ماننا ہوتا ہے اور اسلام نے صرف خاوند کی خدمت کرنے کا کہا ہے۔ برائے مہربانی مجھے قرآن وحدیث کی روشنی میں بتا دیں کہ اس بات میں کتنی سچائی ہے؟

  • سائل: وحید خالدمقام: کویت
  • تاریخ اشاعت: 23 جنوری 2013ء

زمرہ: والدین کے حقوق

جواب:

یہ تو درست ہے کہ شرعا اور قانونا بہو پر ساس کی خدمت لازمی نہیں ہے، لیکن اخلاقی طور پر اگر وہ اپنی ساس کی خدمت کرے تو اس کے لیے بہتر اور باعث اجر ہو گا۔ اگر میاں بیوی ایک دوسرے کے والدین کا ادب واحترام کریں تو دونوں کے دلوں میں ایک دوسرے کا عزت واحترام بڑھتا ہے۔ زندگی کو جنت بنانے کا بہترین طریقہ ہے کہ میاں بیوی ایک دوسرے کو اپنے والدین کی طرح سمجھیں، کوئی فرق نہ کریں تو ہزاروں مسائل جو آجکل کافی گھروں میں چل رہے ہیں حل ہو سکتے ہیں۔ گھروں میں لڑائی جھگڑوں کی زیادہ وجوہات جو ہماری پاس آتی ہیں، وہ یہی ہیں کہ میاں بیوی ایک دوسرے کے والدین کو اپنے والدین کی طرح نہیں سمجھتے ہیں، جس کی بنا پر ایک دوسرے میں نفرتیں جنم لیتی ہیں اور یہ معاملات بڑھتے بڑھتے بعض اوقات میاں بیوی میں علیحدگی کا سبب بن جاتے ہیں۔ اس لیے ہمارا مشورہ یہی ہے کہ ایک دوسرے کے والدین کی خدمت کو اپنا اخلاقی فرض سمجھیں، پھر دیکھیں زندگی کتنی خوشگوار گزرتی ہے۔

واللہ و رسولہ اعلم بالصواب۔

مفتی: عبدالقیوم ہزاروی

اہم سوالات
  • بٹ کوئن کی ٹریڈنگ کا کیا حکم ہے؟
  • قطع تعلقی کرنے والے رشتے داروں سے صلہ رحمی کا کیا حکم ہے؟
  • مزارات پر پھول چڑھانے اور چراغاں کرنے کا کیا حکم ہے؟