کیا مرد و عورت کا سجدہ میں بازو بچھانا منع ہے؟

سوال نمبر:1396
عورتیں سجدے میں بازو نہ بچھائیں : بہت سی عورتیں سجدہ میں بازو بچھا لیتی ہیں اور پیٹ کو رانوں سے ملا کر رکھتی ہیں اور دونوں قدموں کو بھی زمیں پر کھڑا نہیں کرتیں۔ واضح ہو کہ یہ طریقہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کے فرمان اور سنت کے خلاف ہے، سنئے ! رسول اللہ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم فرماتے ہیں : تم میں سے کوئی (مرد یا عورت) اپنے بازو سجدے میں اس طرح نہ بچھائے جس طرح کتا بچھاتا ہے۔ (بخاری و مسلم) کیا یہ حدیث درست ہے؟ مرد اور عورت کی نماز میں فرق کیوں ہے؟ پلیز تفصیل سے بیان کریں

  • سائل: آمنہ منہاسمقام: لاہور، پاکستان
  • تاریخ اشاعت: 02 فروری 2012ء

زمرہ: احکامِ نماز برائے خواتین  |  نماز  |  عبادات

جواب:

اس سوال کا تفصیلی جواب گزر چکا ہے
براہِ مہربانی مطالعہ کے لیے یہاں کلک کریں

واللہ و رسولہ اعلم بالصواب۔

اہم سوالات
  • بٹ کوئن کی ٹریڈنگ کا کیا حکم ہے؟
  • قطع تعلقی کرنے والے رشتے داروں سے صلہ رحمی کا کیا حکم ہے؟
  • مزارات پر پھول چڑھانے اور چراغاں کرنے کا کیا حکم ہے؟