Fatwa Online Durood-e-Minhaj
Home Latest Questions Most Visited Ask Scholar
   
فتویٰ آن لائن - اونی، سوتی اور دیگر کپڑے کی جرابوں پر مسح کرنا کیسا ہے؟

اونی، سوتی اور دیگر کپڑے کی جرابوں پر مسح کرنا کیسا ہے؟

موضوع: طہارت   |  وضوء   |  موزوں پر مسح

سوال پوچھنے والے کا نام: ثاقب جان       مقام: پشاور، پاکستان

سوال نمبر 1345:
ہمارے چند دوست اونی، سوتی اور کپڑے وغیرہ کے جرابوں پر مسح کے قائل ہیں اور امام ابو حنیفہ کے بارے میں بھی فرماتے ہیں کہ اُنہوں نے آخر میں اپنے قول سے رجوع کیا تھا کہ صرف چمڑے کے موزوں پر مسح جائز ہے۔ مہربانی کر کے قرآن اور حدیث کی روشنی میں راہنمائی کریں۔

جواب:

اونی، سوتی اور دیگر کپڑے کی جرابوں پر مسح کرنا جائز نہیں ہے، کیونکہ نہ وہ مجلد (یعنی ٹخنوں تک چمڑے سے منڈھے ہوئے) ہیں، نہ منعل (یعنی تلاء چمڑے کا لگا ہوا ہے) اور نہ وہ ایسی ہیں جنہیں پہن کر پیدل چلیں تو پھٹ جائیں اور اگر ان پر پانی پڑے تو فوراً پاؤں تک چلا جائے، لہذا ان پر مسح کرنا جائز نہیں ہے، یہی احناف کا مذہب ہے۔ فقہ حنفی کی سب کتابوں میں امام صاحب کا یہی موقف ہے۔

(فتاوی رضویہ، مختصر القدوری، رد المختار)

واللہ و رسولہ اعلم بالصواب۔

مفتی: حافظ محمد اشتیاق الازہری

تاریخ اشاعت: 2012-01-05


Your Comments