نماز جنازہ میں‌ صفوں کی تعداد طاق کیوں‌ رکھی جاتی ہیں؟

سوال نمبر:1247
جنازہ میں طاق صفوں کا کیا مسئلہ ہے؟ جہاں تک میرا ناقص مطالعہ ہے حضور علیہ السلام نے نجاشی بادشاہ کا جنازہ پڑھایا تو دو صفیں تھیں۔ براہ مہربانی جواب ارسال کریں تاکہ رہنمائی مل سکے۔ شکریہ

  • سائل: عابد حسین حسنیمقام: اوکاڑہ ،پاکستان
  • تاریخ اشاعت: 06 مارچ 2012ء

زمرہ: نماز جنازہ

جواب:

اس میں پہلی بات تو یہ ہے کہ

ان الله وتر و يحب الوتر

صحيح مسلم، جلد 4، صفحه 2062، حديث نمبر 2677

اللہ تعالیٰ طاق ہے اور طاق کا عدد اس کو پسند ہے۔

اس لیے صفوں کی تعداد طاق رکھی جاتی ہے۔

دوسری بات یہ کہ شریعت میں ضروری نہیں کہ صفوں کی تعداد طاق ہی ہو۔ جتنی بھی صفیں ہوں، اس میں شرعاً کوئی حرج نہیں ہے، لیکن طاق عدد اللہ تعالیٰ کو پسند ہے، اس لیے طاق کا عدد افضل اور بہتر ہے۔

واللہ و رسولہ اعلم بالصواب۔

مفتی: حافظ محمد اشتیاق الازہری

اہم سوالات
  • بٹ کوئن کی ٹریڈنگ کا کیا حکم ہے؟
  • قطع تعلقی کرنے والے رشتے داروں سے صلہ رحمی کا کیا حکم ہے؟
  • مزارات پر پھول چڑھانے اور چراغاں کرنے کا کیا حکم ہے؟